Category: poetry


A poem from my heart

جاتا پل جب آ نے والے پل کا ہاتھ پکڑ تا ہے

میری خواب سراۓ  میں اک نیا دریچہ کھلتا ہے

پھر میں اس میں جھانک کے جانے کتنے منظر دیکھتی ہوں

وقت کا د ھ ار ا جیسے میرے ساتھ ہی چلتا رکتا ہے

میری سوچیں مجھے اڑ ا  کر دور کہیں لے جاتی ہیں

اس انجان  محل میں جس کا ہر اک برج سنہرا هے

جس میں چند اکیلی یادیں صدیوں سے لہراتی ہیں

لیکن جس کے در پیے آج بھی تیز ہوا کا پہرا ہے

سینکڑ و ں بار صدا  دینے پرایک جھروکا  کھلتا ہے

اک ان جانی سرگوشی مجھے اپنے پاس بلاتی ہے

سب کلیوں سے شبنم چن کر میرے ہاتھ پی رکھتی ہے

اور گھٹا کےآ ینۓ میں سارا جہاں دکھلاتی ہے

سوچ سمندر کی سیپوں  سے موتی چنتی رہتی ہوں

میں اپنے دل کی سب با تیں اس ہمدم سے کہتی ہوں

وو بے شکل صدا  میرا ہر خواب مکمل کرتی ہے

چند کو میرے ہاتھ کا کنگن دھنک کو آنچل کرتی ہے

لیکن نام پتا پوچھوں تو وہ چھپ سی ہو جاتی ہے

بند ہوتا ہے محل جھروکا پھر سے کہیں کھو جاتی ہے

                                              saleha waseem

Advertisements

محبت اوس کی صورت

پیاسی پنکھڑی کے ہونٹ کو سیراب کرتی ہے

گلوں کی آستینوں میں انوکھے رنگ بھرتی ہے

سحر کے جھٹپٹے میں گنگناتی، مسکراتی جگمگاتی ہے

محبت کے دنوں میں دشت بھی محسوس ہوتا ہے

کسی فردوس کی صورت

محبت اوس کی صورت

محبت ابر کی صورت

دلوں کی سر زمیں پہ گھر کے آتی ہے اور برستی ہے

چمن کا ذرہ زرہ جھومتا ہے مسکراتا ہے

ازل کی بے نمو مٹی میں سبزہ سر اُٹھاتا ہے

محبت اُن کو بھی آباد اور شاداب کرتی ہے

جو دل ہیں قبر کی صورت

محبت ابر کی صورت

محبت آگ کی صورت

بجھے سینوں میں جلتی ہے تودل بیدار ہوتے ہیں

محبت کی تپش میں کچھ عجب اسرار ہوتے ہیں

کہ جتنا یہ بھڑکتی ہے عروسِ جاں مہکتی ہے

دلوں کے ساحلوں پہ جمع ہوتی اور بکھرتی ہے

محبت جھاگ کی صورت

محبت آگ کی صورت

محبت خواب کی صورت

نگاہوں میں اُترتی ہے کسی مہتاب کی صورت

ستارے آرزو کے اس طرح سے جگمگاتے ہیں

کہ پہچانی نہیں جاتی دلِ بے تاب کی صورت

محبت کے شجر پرخواب کے پنچھی اُترتے ہیں

تو شاخیں جاگ اُٹھتی ہیں

تھکے ہارے ستارے جب زمیں سے بات کرتے ہیں

تو کب کی منتظر آنکھوں میں شمعیں جاگ اُٹھتی ہیں

محبت ان میں جلتی ہے چراغِ آب کی صورت

محبت خواب کی صورت

محبت درد کی صورت

گزشتہ موسموں کا استعارہ بن کے رہتی ہے

شبانِ ہجر میںروشن ستارہ بن کے رہتی ہے

منڈیروں پر چراغوں کی لوئیں جب تھرتھر اتی ہیں

نگر میں نا امیدی کی ہوئیں سنسناتی ہیں

گلی جب کوئی آہٹ کوئی سایہ نہیں رہتا

دکھے دل کے لئے جب کوئی دھوکا نہیں رہتا

غموں کے بوجھ سے جب ٹوٹنے لگتے ہیں شانے تو

یہ اُن پہ ہاتھ رکھتی ہے

کسی ہمدرد کی صورت

گزر جاتے ہیں سارے قافلے جب دل کی بستی سے

فضا میں تیرتی ہے دیر تک یہ

گرد کی صورت

محبت درد کی صورت

Ilahi teri chokhat per bhikari ban ker aya hoon,

Sarapa faqr hoon, ijz-o-nadamat saath laya hoon,

Bhikari woh ke jis ke paas jholi hai na payala hai,

Bhikari woh jisey hiras-o-hawas nay maar dala hai,

Mata-e-deen-o-danish, nafs ke hathon se lutwa ker.

Sakoon-e-qalb ki daulat hawas ki bhent charha ker,

Lutta ker sari poonji ghaflat-o-issyan ki daldal mein,

Sahara lene aya hoon tere kaabay ke aanchal mein,

Gunahon ki lipatt sey, kaynat-e-qalb afsurda,

Iraaday muzmehehal, himmat shikasta hoslay murda,

Kahan say laoon takat dil ki sachi tarjumani ki,

Ke kis jhanjhal mein guzri hein ghariyan zindagani ki.

Khulasa yeh ke bus jull bhun ker apni roo-sayahi sey

Sarapa faqr ban ker apni haalat ki tabahi sey,

Tere darbar mein laya hoon apni ab zaboon-haali,

Teri chokhat ke laeq har amal se hath hein khali,

Yeh Tera ghar hai ye Tere mehr ka darbar hai Maula

Sarapa noor hai, ik mohbat-e-anwaar hai Mola.

Teri chokhat ke jo adab hein, main unn se khali hoon,

Nahi jis ko saleeqa manganey ka, woh sawali hoon

Zuban ghalt-e-nadamat dil ki na’kas tarjumani per,

Khudaya reham meri iss zaban-e-ijz-zabani per,

Ye ankhein khushk hein, Ya Rabb inhein rona nahi aata,

Sulagtay daagh hein dil mein jinhein dhona nahi aata.

Ilahi teri chokhat per bhikari ban kay aaya hoon,

Sarapa faqr hoon, ijz-o-nadamat saath laya hoon,


میں کی کیتا ہاسے ہاسے

لے بیٹھی آ ں پریت دی کھاری

ہن چکاں تے بھا روں ڈردی

نہ چکاں تاں قولؤں ہاری

Salam pakistan

                                                                                                                            

خدا کرے میری ارض پاک پر اترے

وہ فصلِ گل جسے اندیشہء زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کِھلا رہے برسوں

یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اُگے وہ ہمیشہ سبز رہے

اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

گھنی گھٹائیں یہاں ایسی بارشیں برسائیں

کہ پتھروں کو بھی روئیدگی محال نہ ہو

خدا کرے نہ کبھی خم سرِ وقارِ وطن

اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو

ہر ایک خود ہو تہذیب و فن کا اوجِ کمال

کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کے لیے

حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

OUR COUNTRY IS OUR DIGNITY, WEAR IT  WITH PRIDE

A lovely short poem

While surfing on the net, i came through this lovely poem . so touching and beautifully woven.

سنو جاناں

محبت رُت میں لازم ھے

بہت عُجلت میں یا تاخیر سے وہ مرحلہ آئے

کوئی بے درد ھو جائے

محبت کی تمازت سے بہت بھرپُور سا لہجہ

اچانک سرد ھو جائے

گُلابی رُت کی چنچل اوڑھنی بھی زرد ھو جائے

تو ایسے موڑ پر ڈرنا نہیں، رُکنا نہیں، گھبرا نہیں جانا

غضب ڈھاتی ھوئی سفّاک موجوں سے

کسی بھی سُرخ طوفاں سے

بہت نازک سی، بے پتوار دل کی ناؤ کو اُس پل

ھمیں دوچار کرنا ھے

ھمارا عہد ھے خود سے

کسی قیمت پہ بھی ھم کو

سمندر پار کرنا ھے

 <font size=”4″ colour=”black>

   تیرے ہوتے جنم لیا ہوتا

مجھ سا نہ کویئی دوسرا ہوتا

سانس لیتا تُو اور میں جی اُٹھتا

کاش مکہ کی میں فضا ہوتا

 

ہجرتوں میں پڑآو ہوتا میں

اور تو کچھ دیر کو رکا ہوتا

 

تیرے حُجرے کے آس پاس کہیں

میں کوئی کچا راستہ ہوتا

بیچ طائف وقت سنگ زنی

تیرے لب پہ سجی دعا ہوتا

کسی غزوہ میں زخمی ہو کر میں

تیرے قدموں میں جا گرا ہوتا

کاش اُحد میں شریک ہو سکتا میں

اور باقی نہ پھر بچا ہوتا

تیری کملی کا سوت کیوں نہ ہوا

تیرے شانوں پہ جھولتا ہوتا

چوب ہوتا میں تیرے چوکھٹ کی

یا تیرے ہاتھ کا عصا ہوتا

تیری پاکیزہ زندگی کا میں

کوئی گمنام واقعہ ہوتا

لفظ ہوتا میں کسی آیت کا

جو تیرے ہونٹ سے ادا ہوتا

میں کوئی جنگجو عرب ہوتا

اور تیرے سامنے جھکا ہوتا

میں بھی ہوتا تیرا غلام کوئی

لاکھ کہتا نہ میں رہا ہوتا

چاند ہوتں تیرے زمانے کا

پھر تیرے حکم سے بٹا ہوتا

پانی ہوتا اداس چشموں کا

تیرے قدموں میں بہہ گیا ہوتا

پودہ ہوتامیں جلتے  صحرا  میں

اور تیرے ہاتھ سے لگا ہوتا

تیری صحبت مجھے مِلی ہوتی

میں بھی تب کتنا خوشنما ہوتا

مجھ پہ پڑتی جو تیری چشمِ کرم

آدمی کیا میں معجز ہ    ہوتا

ٹکرا ہو میں ایک بادل کا

اور تیرے ساتھ گھومتا ہوتا

آسمان ہوتا عہد نبوی کا

تجھ کو حیرت سے دیکھتا ہوتا

خاک ہوتامیں تیری گلیوں کی

اور تیرے پاؤں چومتا ہوتا

پیڑ ہوتا کھجور کا کوئی

جسکا پھل تونے کھا لیا ہوتا

بچہ ہوتا غریب بیوہ کا

سر تیری گودہ میں چھپا ہوتا

رستہ ہوتا تیرے گزرنے کا

اور تیرا رستہ دیکھتا ہوتا

بُت ہی ہوتا میں خانہ کعبہ میں

جو تیرے ہاتھ سے فنا ہوتا

مجھ کو خالق بناتا غار حَسَن

اور میرا نام بھی حِرَا ہوتا

[حَسَن نثار]

 <font>

I wonder…
If the Prophet Muhammad visited you,Just for a day or two;

If he came unexpectedly I wonder what you’d do.

Oh! I know you’d give your nicest room To such an honored guest;

And all the food you’d serve to him Would be the very best;

And you would keep assuring him, You’re glad to have him there;

Your hospitality would be beyond belief And service beyond compare.

But… when you saw him coming, Would you meet him at the door With arms

outstretched in welcome To your honoured visitor?

Or… would you have to change your Clothes before you let him in?

Or hide some magazines and put The Quran where they had been?

Would you still watch movies On your trusty TV set?

Or would you rush to switch it off Before he gets upset?

Would you turn off the radio And hope he hadn’t heard?

And wish you hadn’t uttered That last loud nasty word?

Would you hide you worldly music And instead take Islamic books out?

Could you let him walk right in, Or would you rush about?

And, I wonder… if the Prophet spent A day or two with you,

Would you go right on doing the things That you always do?

Would you go right on saying the things You always used to say?

Would life for you continue As it does from day to day?

Would your family conversation Keep its usual pace?

Or would you find it hard each meal To say a table grace?

Would you keep up each and every Prayer, forcing back a frown?

And would you always jump up early For every prayer at dawn?

Would you sing the songs you always do And read the books you read?

And let him know things on which Your mind and spirit feed?

Would you take the Prophet with you Everywhere you normally go?

Or would you , maybe, change your plan Just for a day or so?

Would you be glad to have him meet Your very closest friends?

Or would you hope they’d stay away Until his visit ends?

Would you be glad to have him stay Forever on and on?

Or would you sigh with great relief When he at last was gone?

It might be interesting to know The things you would do

If the Prophet Muhammad, in person, Came to spend some time with you.

source; islamicinformation.net

a poem from my heart

جاتا پل جب آ نے والے پل کا ہاتھ پکڑ تا ہے
میری خواب سراۓ  میں اک نیا دریچہ کھلتا ہے
پھر میں اس میں جھانک کے جانے کتنے منظر دیکھتی ہوں
وقت کا د ھ ار ا جیسے میرے ساتھ ہی چلتا رکتا ہے
میری سوچیں مجھے اڑ ا  کر دور کہیں لے جاتی ہیں
اس انجان  محل میں جس کا ہر اک برج سنہرا هے
جس میں چند اکیلی یادیں صدیوں سے لہراتی ہیں
لیکن جس کے در پیے آج بھی تیز ہوا کا پہرا ہے
سینکڑ و ں بار صدا  دینے پرایک جھروکا  کھلتا ہے
اک ان جانی سرگوشی مجھے اپنے پاس بلاتی ہے
سب کلیوں سے شبنم چن کر میرے ہاتھ پی رکھتی ہے
اور گھٹا کےآ ینۓ میں سارا جہاں دکھلاتی ہے
سوچ سمندر کی سیپوں  سے موتی چنتی رہتی ہوں
میں اپنے دل کی سب بٹن اس ہمدم سے کہتی ہوں
وو بے شکل صدا  میرا ہر خواب مکمل کرتی ہے
چند کو میرے ہاتھ کا کنگن دھنک کو آنچل کرتی ہے
لیکن نام پتا پوچھوں تو وہ چھپ سی ہو جاتی ہے

بند ہوتا ہے محل جھروکا پھر سے کہیں کھو جاتی ہے